خاک نگر

ارمان خاک نگر کے
بے تاب جسموں میں گھر کیے
مایوس روح کو امر کیے
بنتے ہیں اک جال پرانا
پوچھتے ہیں مجھ سے میری منزل کا ٹھکانہ
عقل ِخام کا روگ پرانا
.امر ہونے کی آس پرانی
یہ آس ،جواکثر بھیس بدلتی ہے
اور بھانت بھانت کے قصّوں کا جال بچھاے
خاموش قدموں پر چلتی آتی ہے میرے پاس
یہ کہنے کہ
اے خاک نگر کی بھٹکی روح
آ  میں تجھے منزل کا پتا دوں
آ میں تجھے امر کر دوں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s